راؤ انوار کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست دوبارہ دائر کرنےکا حکم

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل )سے نکالنے کی درخواست دوبارہ دائر کرنے کا حکم دے دیا۔

جسٹس عمرعطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3رکنی بینچ نے سابق ایس ایس پی ملیرراؤ انوار کا نام ای سی ایل سے نکالنے سے متعلق درخواست کی سماعت کی ۔

 وکیل راؤ انوار نے دلائل دیتے ہوئے مؤقف اپنایا کہ عدالت نے نقیب اللہ کے قتل کا نوٹس لیا ،راؤانوار کے عدالت میں پیش ہونے پر ضمانت دی تھی جس کے بعد راؤ انوار کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا گیا تھا۔

جسٹس عمرعطا بندیال نے ریمارکس دیئے کہ ای سی ایل سے نام نکلوانے کا طریقہ ہے ، راؤ انوار پولیس آفیسرہیں توبیرون ملک کیوں جانا چاہتے ہیں ؟ کیا ان کا بیرون ملک کاروبار ہے  ؟ ۔

وکیل نے فیملی سے ملنے کیلئے جانے کا عضر پیش کیا تو جسٹس عمر عطا بندیال نے راؤ انوار پر کوئی اور مقدمہ یا انکوائری ہونے کا پوچھا ۔

وکیل نے انکار کیا تو جسٹس فیصل عرب نے اخباروں کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ راؤ انوار پر مزید انکوائریاں ہیں ۔

وکیل فیصل صدیقی نے دلائل دیئے کہ 444 افراد کے قتل کے حوالے سے بہت سے چیزیں چل رہی ہیں ،راؤ انوار کیخلاف نیب میں اثاثوں سے متعلق انکوائری ہے ۔

 جسٹس عمرعطا بندیال نے کہا کہ اس نوعیت کے توبہت سے کیسز ہیں، اس کیس کو نہیں دیکھ رہے۔

 عدالت نے نظرثانی درخواست عدالتی فیصلے کے ساتھ  دوبارہ دائر کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت غیرمعینہ مدت کیلئے ملتوی کردی۔

loading...
loading...