بھارت کا  اگنی فائیو میزائل: دنیا کے لئے خطرے کی گھنٹی

Untitled-1-Recovered

بھارت نے طویل دوری تک مار کرنے والے  بین البر اعظمی میزائل ( اگنی فائیو)کا کامیاب تجربہ کیا ہے، جو نہ صرف چین بلکہ دوسرے یورپی ممالک کے لئے بھی خطرے کی گھنٹی ہے۔

اگنی فائیو کے ذریعے بھارت  یورپ، آسٹریلیا یہاں تک کہ روس تک  کو اپنا حدف بنا سکتا ہے۔

بھارتی میڈیا اور بھارت کی وزارت دفاع کےسرکاری ٹویٹر اکاؤنٹ سے جاری کردہ ایک پیغام کے مطابق،  اگنی فائیو پانچ ہزار کلومیٹر رینج  تک حدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ جبکہ دانشوروں کی تشخیص ( انٹیلی جنس اسسمنٹ) کے مطابق، یہ بین البر اعظمی میزائل ( اگنی فائیو) آٹھ ہزار کلو میٹر رینج یا اس بھی زیادہ دوری پر حملہ کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

نریندر مودی کے اقتدار میں آنے کے بعد بھارت نے 2014 سے  اب تک  بہت سے دفاعی معاہدوں پر دستخط کیے ہیں۔ بھارت کی سول اور عسکری قیادت کے اس شدّت پسندانہ اور جنگی رویے کے نتائج تباہ کن ہوسکتے ہیں۔

اس سے قبل بھارت  نے ایٹمی ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ کے معاہدے (این پی ٹی)کا رکن بننے سے انکار کردیا تھا، جبکہ  جوہری تجربات پر پابندی کے معاہدے (سی ٹی بی ٹی) پر دستخط کرنے سے بھی منع کرچکا ہے۔

لیکن بھارت میزئل ٹیکنالوجی کے نگران گروپ(ایم ٹی سی آر) میں شامل ہے،  اور ویسنار معاہدے ( متنازعہ ہتھیاروں کا معاہدہ) سے بھی فائدہ اُٹھا رہا ہے۔ انڈیا امریکا کی مدد سے  نیوکلیئر سپلائرز گروپ  بھی شمولیت اختیار کرنا چاہتا ہے۔

loading...
loading...