بھارت میں مسلمان مدارس کیخلاف تادیبی کارروائیاں

File Photo

File Photo

بھارت میں مسلمانوں کے مدارس کیخلاف بھی تادیبی کارروائیوں کا آغاز کردیا گیا۔ بھارت میں دوہزار تین سو سے زائد مدرسوں کو جعلی قرار دینے کی  سازش شروع کردی گئی۔ اترپردیش میں اقلیتوں کے وزیر لکشمی ناراین چوہدری نے کہا ہے کہ ریاست کا اقلیتی برادری کیلئے فلاحی محکمہ مدارس کو جعلی قرار دینے پر غور کررہا ہے۔

پریس ٹرسٹ آف پاکستان کے مطابق اپنے انٹرویو میں لکشمی ناراین کا کہنا تھا کہ ریاست میں مجموعی طور پر انیس ہزار سے زائد مدارس قائم ہیں ۔ ان مدارس میں سے سو لہ ہزار سے زائد نے اپنی معلومات رجسٹریشن کیلئے بورڈ کی ویب سائٹ پر جمع کرادی ہیں تاہم اب بھی دوہزار تین سو سے زائد مدارس نے کسی بھی قسم کی تفصیلات جمع نہیں کرائی ہیں۔

اپنے انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ اب یہ مدارس کہاں ہیں اور ہم اب ان کو جعلی تصور کررہے ہیں اور ہوسکتا ہے کہ رواں ماہ کے اختتام تک ان مدارس کیخلاف ایکشن لے لیا جائے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ ریاستی حکومت رواں ماہ کے آخر تک ان کی جانب سے معلومات کی منتظر رہیگی اور رجسٹرڈ مدارس کے کسی بھی طلبہ کو کسی بھی امتحان کو دینے سے محروم نہیں رکھا جائیگا۔ اپنے انٹرویو میں انہوں نے مزید کہا کہ مدارس کی رجسٹریشن کی تاریخ میں کئی مرتبہ توسیع کی گئی ہے تاہم ابھی تک کسی غیر رجسٹرڈ شدہ مدارس کے پرنسپل، استاد یا شاگرد نے رابطہ نہیں کیا ہے۔

Courtesy: Outlookindia.com