کم عمر میں موت سے بچنے کیلئے ایک عادت اپنائیں

Untitled-1

آج کل ادھیڑ عمری یا درمیانی عمر میں ہونے والی اموات کی شرح بڑھتی جا رہی ، جس کی زیادہ تر وجہ دل کا دورہ اور فالج جیسی جان لیوا بیماریاں ہیں۔ لیکن آسٹریلیا میں ہونے والی ایک تحقیق میں اس خطرے کو ٹالنے کیلئے ایک آسان عادت اپنانے کا مشورہ دیا گیا ہے، جسے  اپنا کر لوگ دل کو صحت مند رکھ کر ہارٹ اٹیک یا فالج جیسے جان لیوا امراض کا خطرہ ٹال سکتے ہیں۔

سڈنی یونیورسٹی کی تحقیق میں بتایا گیا کہ درمیانی عمر میں لوگ اگر تیز چلنے کو عادت بنالیں تو وہ فالج یا ہارٹ اٹیک کے خطرے کو 50 فیصد تک کم کرسکتے ہیں۔

15  سال تک چلنے والی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ 30 سال یا اس سے زائد عمر کے افراد کے چلنے کی اوسط رفتار اگر 3 میل فی گھنٹہ ہو تو مختلف امراض سے موت کا خطرہ 20 فیصد تک کم کرسکتے ہیں ، خصوصاً فالج یا ہارٹ اٹیک سے موت کا خطرہ 50 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: وہ نوکریاں جنہیں کرنے والے مردوں کی جلدی موت ہوجاتی ہے

محققین نے یہ دریافت کیا کہ تیز رفتار سے چلنا ہر عمر کے افراد کے دل کی صحت کو بہتر بناتا ہے، مگر اس کا سب سے زیادہ فائدہ 60 سال سے زائد عمر کے افراد کو ہوتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس عمر کے افراد کی اوسط رفتار 3 سے 4 میل فی گھنٹہ ہو تو ہارٹ اٹیک یا فالج کا خطرہ آہستگی سے چلنے والوں کے مقابلے میں 53 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ تیز چلنا عام طور پر 3 سے 4.35 میل فی گھنٹہ کی رفتار سمجھی جاتی ہے، مگر اس کا انحصار چلنے والے کے فٹنس لیول پر ہوتا ہے، تو تیز چلنے کا عندیہ ہلکا سا سانس چڑھ جانا یا پسینہ آنے کی صورت میں بھی ملتا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: پاکستان کو دھوکہ دینے والے ماؤنٹ بیٹن کی عبرت ناک موت

اس تحقیق کے دوران یہ جاننے کی کوشش کی گئی تھی کہ سست رفتار سے چلنے اور شریانوں سے جڑے امراض، کینسر یا کسی بھی وجہ سے موت کے درمیان تعلق ہے یا نہیں ، اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے برٹش جرنل آف اسپورٹس میڈیسین میں شائع ہوئے۔

بشکریہ sydney.edu.au

loading...
loading...