مکڑیاں سالانہ کتنا گوشت کھاتی ہیں؟ جان کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے

فائل فوٹو

فائل فوٹو

سائنسدانوں کے مطابق مکڑیاں سالانہ بنیادوں پر انسانوں کی نسبت دوگنا گوشت کھاتی ہیں۔دنیا بھر کی25ملین میٹرک ٹن وزن کی مکڑیاں سالانہ800ملین ٹن گوشت کھاتی ہیں۔

دا سائنس آف نیچر‘ نامی جریدے نے جرمنی، سوئٹزرلینڈ اور سویڈن سے تعلق رکھنے والے سائنسدانوں کی ایک تحقیق شائع کی ہے جس کے مطابق یہ ننھی منی مخلوق دنیا بھر میں سالانہ بنیادوں پر جتنے کیڑے مکوڑے کھا جاتی ہیں، انہیں تولا جائے تو ان کا وزن قریب 800 ملین میٹرک ٹن بنتا ہے۔اس کے مقابلے میں دنیا بھر کے انسان سالانہ 400 ملین میٹرک ٹن گوشت کھاتے ہیں۔ یعنی مکڑیاں ہر سال انسانوں کی نسبت قریب دگنا گوشت کھا جاتی ہے۔

مکڑیوں اور انسانوں کے بعد وہیل مچھلیاں تیسرے نمبر پر ہیں جو سالانہ 280 تا 500 ملین میٹرک ٹن خوراک کھاتی ہیں۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ مکڑیوں کی شکار کرنے کی ہوس اگر ماحولکے حساب سے  کم یا زیادہ بھی ہو جاتی ہے۔ سائنسدانوں نے یہ تخمینہ مکڑیوں کے وزن سے لگایا ہے۔

اب تک سائنسدانوں کا خیال تھا کہ مکڑیاں فصلوں میں موجود حشرات الارض کے خاتمے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ لیکن اس تازہ تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ کھیتوں کھلیانوں میں موجود کیڑے مکوڑوں کے خاتمے میں مکڑیوں کا کردار دراصل بہت کم ہے۔ مکڑیاں سب سے زیادہ جنگلات میں موجود حشرات الارض کا شکار کرتی ہیں۔

مکڑیوں کی نوے فیصد سے زائد غذا حشرات الارض پر مبنی ہوتی ہے۔ تاہم کیڑے مکوڑوں، مکھیوں اور مچھروں کا شکار کرنے کے علاوہ مکڑیوں کی کچھ قسمیں ایسی بھی ہیں جو مینڈکوں، چھپکلیوں، سانپوں اور مچھلیوں سے لے کر چمگادڑوں سمیت پرندوں تک کو کھا جاتی ہیں۔

بشکریہ stateviews /springer