نیب چھ چھہ ماہ بعد کرپشن کی درخواستوں پر نوٹس لیتا ہے،چیف جسٹس سپریم کورٹ

anwar-zaheer

فائل فوٹو

اسلام آباد:چیف جسٹس سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ نیب چھ چھہ ماہ بعد کرپشن کی درخواستوں پر نوٹس لیتا ہے، ساری تباہی کی وجہ نیب کی سستی ہے۔

پندرہ ارب روپے کی مبینہ کرپشن میں ملوث ملزم انعام اکبر کا نام ای سی ایل سے نکالنے سے متعلق کیس کی سماعت سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ نے کی۔ پراسیکیوٹر نیب نے عدالت کو بتایا کہ کیس میں شرجیل میمن کا نام بھی آرہا ہے، ان کے خلاف انکوائری کی منظوری دے دی گئی ہے۔

چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے نیب کی سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ نیب جب انکوائری کا نوٹس چھہ ماہ بعد لے گا تو ملزم اکاونٹ میں پیسے رکھ کر نیب کے انتظار میں بیٹھا رہے گا، سماعت کے دوران ملزم کے وکیل یاسین آزاد نے اپنے دلائل میں کہا کہ ان کا موکل سولہ اپریل کو پاکستان سے باہر جائے گا اور ستائیس اپریل کو واپس آ جائے گا۔

عدالت نے انعام اکبر کو ضمانت پر بیرون ملک جانے کی اجازت دیتے ہوئے سماعت مئی کے دوسرے ہفتے تک ملتوی کردی۔

loading...
loading...