‘آئی ایم  ایف سے 8 ارب ڈالر تک معاہدے پر اصولی اتفاق ہو گیا ہے’

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر-فائل فوٹو

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر-فائل فوٹو

اسلام آباد: وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے دعویٰ کیا ہے کہ عالمی مالیاتی فنڈ آئی ایم ایف سے 8 ارب ڈالر تک معاہدے پر اصولی اتفاق ہوگیا ہے۔آئی ایم ایف سے ہونے والے معاہدے کو پارلیمنٹ کے ساتھ شیئر کیا جائے گا۔ معاہدے کے بعد پاکستان عالمی مارکیٹ میں بانڈز جاری کرے گا۔

 قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی خزانہ کا اجلاس فیض اللہ کاموکا کی زیر صدارت ہوا۔ وزیر خزانہ اسد عمر نے آئی ایم ایف پروگرام پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاملات طے ہوگئے ہیں۔ آئی ایم ایف مشن اپریل کے آخری ہفتے میں پاکستان پہنچے گا۔ مشن کے پہنچنے پر مالیاتی قرض کا معاہدہ فائنل ہو جائے گا۔

آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ کمیٹی اجلاس میں بھی شئیر کیا جائے گا۔ اسد عمر نے کہا کہ جیسے ہی آئی ایم ایف کا پروگرام ہوگا ورلڈ بینک اور اے ڈی بی سے بڑی فنڈنگ ملے گی۔ آئی ایم ایف مشن کے ساتھ تکنیکی تفصیلات طے کی جائیں گی۔آئی  ایم ایف پروگرام کے بعد کیپیٹل مارکیٹ کی حالت بہتر ہوگی۔

کمیٹی اجلاس کے میڈیا سے بات چیت میں اسد عمر نے کہا کہ آئی ایم ایف سے 6 سے 8 ارب ڈالر ملنے کا امکان ہے۔ آئی ایم ایف کی ٹیم اپریل کے آخری ہفتے میں آئے گی۔ آئی ایم ایف اور عالمی بینک سے 15 ارب ڈالر قرضہ ملنے کا امکان ہے ۔

اسد عمر نے بتایا کہ ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کل منظوری کیلئے کابینہ میں پیش کی جائے گی۔

وزیر خزانہ کے عہدے سے ہٹائے جانے کے حوالے سے اسد عمر  کہا کہ ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے ۔

دوسری جانب  آئی ایم ایف  کی جانب سے جارہی ہونے والے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی حکام اور آئی ایم ایف کے درمیان واشنگٹن میں تعمیری مذاکرات ہوئے۔پاکستانی حکام کی درخواست پرآئی ایم ایف کا وفد اپریل آخرمیں  پاکستان کا دورہ کرےگا۔ یہ دورہ پاکستانی حکام کی درخواست پر ہوگا۔

loading...
loading...