العزیزیہ اسٹیل ملز،فلیگ شپ ریفرنسز کا فیصلہ 24دسمبر کو سنانے کا حکم

اسلام آباد:کیا دسمبر بھی ڈھائے گا ستم ؟ پھر سزا پائیں گے یا ملے گی کلین چٹ ؟شریف خاندان کیخلاف 2ریفرنسز میں فیصلے کا دن آگیا، سپریم کورٹ نے العزیزیہ اسٹیل ملز اور فلیگ شپ ریفرنسز کا فیصلہ 24دسمبر کو سنانے کا حکم صادر کردیا۔

بار بار وقت لینے آجاتے ہیں پوری قوم اور عدلیہ کومحصوربنا رکھا ہےچیف جسٹس نیب ریفرنسزکی سماعت کی مدت میں توسیع کی درخواست پربرہم ہوگئے،24دسمبر کو فیصلہ سنانے کاحکم صادر کردیا۔

سپریم کورٹ میں نوازشریف کیخلاف ریفرنسز کی مدت میں توسیع کی درخواست کی سماعت ہوئی۔

نوازشریف کے وکیل خواجہ حارث نے 2ہفتے مزید مہلت کی استدعا کی جس پر چیف جسٹس نے برہمی  کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بارباروقت لینے آجاتے ہیں کیا الف لیلیٰ کی کہانیاں بیان کرنی ہوتی ہیں ساری قوماورعدلیہ کومحصوربنا کررکھاہے ۔

خواجہ حارث نےپوچھاکہ کیا چیف جسٹس کوکوئی شکایت موصول ہوئی ہے ؟جس پرچیف جسٹس بولےکہ شکایت نہیں لیکن ایسا تاثر ضروردیا جا رہا ہےکیس کو کیوں لٹکا رہے ہیں،آپ کیسے بڑے وکیل ہیں؟۔

خواجہ حارث بولے کہ انہوں نے کبھی بڑا وکیل ہونے کا دعویٰ نہیں کیا،جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ اگروقت پرکام مکمل نہیں کرسکتے توکیس لیا ہی نہ کریں ۔

خواجہ حارث نےکہا کہ چیف جسٹس کو ایسا تاثرلگتا ہےتومقدمہ چھوڑ دیتا ہوں۔

عدالت نے مقرر مدت تک بحث مکمل کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے 17دسمبر تک فریقین کو بحث مکمل کرنے اور24دسمبرتک العزیزیہ اورفلیگ شپ ریفرنسزکا فیصلہ سنانے کا حکم دے دیا۔

loading...
loading...