ہماری پالیسی کےثمرات 100 دن کے بعد نظر آئینگے: وزیر اعظم

وزیر اعظم پاکستان عمران خان-فائل فوٹو

وزیر اعظم پاکستان عمران خان-فائل فوٹو

لاہور:وزیر اعظم عمران خان سنتارہتا ہوں کہ تبدیلی کدھر ہے۔

اتوار کو وزیراعظم عمران خان نے کی میڈیا نمائندگان سےگفتگو کی۔

گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ سب سے پہلے عثمان بزدار کا تعارف کرانا چاہتا ہوں۔سنتارہتا ہوں کہ تبدیلی کدھر ہے۔عثمان بزدار تبدیلی کانام ہے۔

ان کاکہنا تھا کہ عثمان بزدارسب سےپسماندہ علاقے سےآتے ہیں۔انہیں معلوم ہےکہ گنداپانی پینےسےکیا حالت ہوتی ہے۔ان کے ہاتھ میں کئی بچوں نے دم توڑا۔

وزیر اعظم نے کہاعثمان بزدارعام آدمی کا درد رکھتے ہیں۔مجھےیقین ہے عثمان بزدار کرپشن نہیں کرے گا۔ عثمان بزدارایک ایماندار آدمی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب کی ترقی کابجٹ تینوں صوبوں سےزیادہ ہے۔میں چاہتاتھاکہ ایساآدمی ہوجو کرپشن نہیں کرے۔

وزیر اعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ عثمان بزدارمیں عاجزی ہے۔وہ سارے ایم پی ایز سے ملتے ہیں۔ وہ پنجاب کے سب سےکامیاب وزیراعلیٰ ہوں گے۔

انہوں نے کہا کسی بھی حکومت کاپہلے2،3ماہ میں فیصلہ نہیں ہوتا۔یہ میری پہلی پریس کانفرنس ہے۔قوم کو بتاؤں گا کہ ہمارے ساتھ ہوا کیا ہے۔

عمران خان نے کہا ان لوگوں نے پاکستان کو کدھر چھوڑا ہے۔ابھی تک ہماری کوئی پالیسی نہیں بنی ہے۔ ہماری پالیسی کےثمرات 100 دن کے بعد نظر آئیں گے۔

انہوں نے بتایا کہ پاکستان کا قرضہ 10سال پہلے 6 ہزار ارب تھا۔2013میں یہ قرضہ 15 ہزارارب ہوگیا۔

وزیر اعظم پاکستان نے مزید کہا  کہ ن لیگ کہتی تھی آصف زرداری کا دوربدترین دور تھا۔2013سے2018 تک قرضہ28ہزار ارب تک گیا۔

تنابڑاقرضےکاجمپ کوئی تصور بھی نہیں کرسکتاتھا۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہاہمارابیرون ملک قرضہ60ارب ڈالرزسے90ارب ڈالرزہوگیا۔مالیاتی خسارہ 2013 میں 2 ارب ڈالرز تھا۔

انہوں نے کہا بجلی میں480ارب روپے کا گردشی قرضہ تھا۔ آج پاورسیکٹرپرگردشی قرضہ12سوارب روپے ہے۔ گیس کاخسارہ157ارب روپے کاہے۔ ریلوےپر37ارب اورپی آئی اے پر360ارب قرضہ ہے۔

ان کا کہنا تھا آمدنی زیادہ اورخرچےکم ہوں توآپکےگھرکےحالات اچھےہیں۔ آج پاکستان کدھر کھڑا ہے۔ کوئی شک نہیں کہ ملک بڑی تیزی سے اوپر اٹھے گا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ بلوچستان میں460ارب ڈالرز کےمعدنیات ہیں۔سرمایہ کارپاکستان میں سرمایہ کاری کیلئےتیارہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہاپاکستان ایک مشکل وقت سےگزرےگا۔اگربجلی کی قیمتیں نہ بڑھائیں توخسارہ بڑھ جائےگا۔گیس کی قیمتیں نہ بڑھیں توقرضہ بڑھ جائےگا۔

عمران خان نے کہا22سال سےکہہ رہاتھاکہ سب سےبڑامسئلہ کرپشن ہے۔پاکستان آج کرپشن کی وجہ سے یہاں کھڑا ہے۔

وزیر اعظم عمران خان نے بتایا کہ دبئی میں 9 سو ارب روپے کی پراپرٹیز لی گئیں۔کسی نے منی لانڈرنگ پر توجہ نہیں دی۔

انہوں نے کہاہم نےاب تک895 پراپرٹیزکی تفصیلات منگوالی ہیں۔ہم نے 300 افراد کو نوٹسز دے دیئے ہیں۔ایک بڑی شخصیت کے نوکرکےنام پرکچھ جائیدادیں ہیں۔

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ 70اکاؤنٹس ایسےپکڑےگئےہیں جوغریبوں کےنام پرہیں۔

عمران خان نے بتایا کہ بجلی کی چوری روکنے کی کوشش کررہے ہیں۔پاورجنریشن پلانٹ اورٹرانسمیشن لائنز ٹھیک کررہے ہیں۔ابھی چوری کی رقم ریکور کرنے پر توجہ ہے۔

شہباز شریف کی گرفتاری پر وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ منڈیلا صاحب کوتفتیش کیلئے بلانےپرکیاقیامت آگئی۔کہاگیا کہ عمران خان سیاسی انتقام لے رہا ہے۔سیاسی انتقام بے بنیاد کیسز بنانا ہوتا ہے۔ن لیگ والےکہہ رہےہیں الیکشن متاثرکرنےکیلئے کیا گیا۔

عمران خان نے کہاقوم سے وعدہ کیا ہے کہ کسی کو نہیں چھوڑنا۔یہ کان کھول کرسن لومیں نےکسی ایک کونہیں چھوڑنا۔میں کسی کواین آراو نہیں دوں گا۔

انہوں نے کہاکہ ملک کو دلدل سے نکالنا ہے توکرپشن پرقابوپاناپڑےگا۔یہاں پرہاتھ ڈالوجمہوریت خطرے میں آجاتی ہے۔احتساب ہو تو وہ جمہوریت تگڑی ہوتی ہے۔

انہوں نے بتایا پاناماکامعاملہ اٹھانےپرمجھ پر 33 ایف آئی آرز کاٹیں۔میں نے 40 سال پرانے ریکارڈز کے جواب دیئے۔میں باہر  سے پیسے لےکر پاکستان آیا۔میں نےتوکبھی سپریم کورٹ کےباہرلوگ جمع نہیں کئے۔میں تو لاکھوں لوگوں کو جمع کرسکتا ہوں۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ چوری آپ نے کی اور جواب نیب آپ کودے۔پیپلزپارٹی اورن لیگ اوپرسےلڑائی اندرسے بھائی بھائی ہیں۔آپ جو مرضی کریں اکٹھے ہوں، سب پتاچل جائے گا۔جب ایک کی کرپشن پرہاتھ ڈالیں توسب اکٹھےہوجاتےہیں۔

انہوں نے کہانیب چیئرمین کوکوئی مددچاہئےحکومت دینےکیلئےتیار ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہاآنے والے ہفتے میں ایک قانون بنانے والے ہیں۔وسل بلوراوروٹنس پروٹیکشن ایکٹ بنائیں گے۔کرپشن کی نشاندہی کرنے والے کو ریکوری کا20فیصددیں گے۔

انہوں نے کہایہ لوگوں کےشناختی کارڈزلی کرجعلی اکاؤنٹس بناتے ہیں۔اس پیسےکوڈالرزمیں منتقل کرکےباہر بھیج دیتے ہیں۔ہم کرپشن پر پوری طرح ہاتھ ڈالیں گے۔برطانیہ نےایک سیاسی شخصیت کےفرنٹ مین کو پکڑلیاہے۔

زمینوں کے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہااب تک 4ہزار 647 کینال زمین اسلام آباد سے پکڑی۔ اس کی قیمت 200 سے 300 ارب روپے ہے۔پنجاب میں اب تک 2 ہزار ایکڑ زمین پکڑ چکے ہیں۔ایک سیاستدان24سوکینال زمین پر قبضہ کر کے بیٹھا تھا۔

loading...
loading...