کیا تین سال تک عوام کو فضلہ ملاپانی پلائیں؟چیف جسٹس  ایڈووکیٹ جنرل سندھ پر برس پڑے

فائل فوٹو

فائل فوٹو

کراچی:چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس ثاقب نثار کا کہنا ہے کہ اگر ٹریٹنمٹ پلانٹ نہ بنیں تو کیا تین سال تک کراچی کے لوگوں کو فضلہ ملا پانی پلائیں گے؟

ماحولیاتی آلودگی اور سمندر میں آلودہ پانی کی آمیزش کےخلاف کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار ایڈووکیٹ جنرل سندھ پر برس پڑے۔

 سماعت کے دوران ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے عدالت کو بتایا کہ کمبائنڈ ٹریٹمنٹ پلانٹ کے حوالے سے وفاقی حکومت کی جانب سےرکاوٹ کا سامنا ہے اور یہ تین سال کا منصوبہ ہے۔

جس پر چیف جسٹس نے کہا تو کیا تین سال تک عوام کو فضلہ ملاپانی پلائیں؟کیا آپ نے واٹر کمیشن کی رپورٹ نہیں دیکھی؟اتنی تاخیر کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی۔

صاف پانی سے متعلق کیس کی سماعت اتوار کو بھی جاری رہے گی۔

loading...
loading...