سپریم کورٹ :مارگلہ ہلزپردرختوں کی کٹائی ،اسلام آباد کاماسٹرپلان طلب

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلزپردرختوں کی کٹائی ازخود نوٹس میں ایمبیسی روڈ توسیع منصوبے پرنظرثانی کی ہدایت کرتے ہوئے اسلام آباد کا ماسٹرپلان طلب کرلیا۔

جمعرات کو سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلزدرختوں کی کٹائی ازخود نوٹس پرسماعت کی،وزیرکیڈ طارق فضل چوہدری عدالت میں پیش ہوئے۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ سی ڈی اے کی ترجیح پیدل چلنے والے نہیں،گاڑی والے ہیں،سی ڈی اے عوام کا مالک بنا ہوا ہے، اس نے 100سال  پرانے درختوں کاقتل عام کیا ،ایک جانب مارگلہ ہلزکوبچانے کے اقدامات ہورہے ہیں ،دوسری جانب سی ڈی اے اسے تباہ کررہاہے۔

عدالت نے وزیرمملکت کیڈ سے مارگلہ ہلزتجاوزات کے خاتمے سے متعلق پوچھا توطارق فضل چوہدری نے بتایا کہ مارگلہ ہلزاوربفرزون میں تجاوزات کے خاتمے کا پہلا مرحلہ آئندہ سال 15مارچ تک مکمل ہوجائے گا،دوسری مرحلے میں زون تھری کی تعمیرات کیلئے قانون سازی کی جائے گی۔

جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہا کہ عوام نے قانون سازی کا اختیارحکومت کودیا ہے اگرکسی نے چیلنج کیا تودیکھ لیں گے۔

عدالت نے کارفری ڈے منانے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ دنیا بھرمیں گاڑیوں کے استعمال کی حوصلہ شکنی کی جا رہی ہے جبکہ یہاں حکومت کوججز ، جرنیل اور وزراء کی گاڑیوں کی فکرہے۔

وکیل درخواستگزارنے ایبٹ آباد میں کان کنی اوربلاسٹنگ کی جانب توجہ دلائی توجسٹس عظمت سعید نےکہاکہ دباوڈال کرعدالت سے فیصلہ نہیں لیا جا سکتا۔

بعدازاں سپریم کورٹ نے سماعت جنوری کے تیسرے ہفتے تک ملتوی کردی ۔