ہمارا بسکٹ تصدیق شدہ حلال نہیں ہے: کمپنی کے اعلان سے ہنگامہ

Untitled-1

پوری دنیا کے مسلمان اس وقت شدید حیرت میں مبتلا ہیں کیونکہ بچوں کے پسندیدہ اور نہایت معروف بسکٹ ‘اوریو’ نے کہا کہ ان کا بسکٹ منطور شدہ حلال نہیں ہے۔

تفصیلات کے مطابق اوریو کی جانب سے اپنی ویب سائٹ پر بھی سوالات کے جوابات والی کیٹیگری میں اس حوالے سے معلومات فراہم کی گئیں ہیں، تاہم عام لوگوں تک یہ معلومات اس وقت پہنچیں جب ایک ٹویٹر صارف نے بسکٹ کے حلال ہونے کے حوالے سے کمپنی سے سوال کیا۔

اوریو کی جانب سے جواب دیا گیا کہ ‘آپ کا ہم سے سوال کرنے کا شکریہ ، اوریو کے بسکٹس حلال نہیں ہیں ۔’

Untitled-1

ایک اور سوریا نامی صارف کے استفسار پر اوریو نے جواب دیا کہ ‘ اوریو برطانیہ اور امریکا میں تصدیق شدہ حلال نہیں ہیں۔’

اس سے قبل دنیا بھر میں  M&M’sپر بحث چھڑی ہوئی تھی کہ وہ حلال نہیں ہے تاہم اس کے بعد اوریو پر بحث چھڑ گئی ہے۔

 

اگر دیکھا جائے تو یہ چاکلیٹ، معدے، چینی ، تیل اور پانی جیسے مختلف اجزاء کے استعمال سے ہی تیار کی جاتی ہے اور یہ تمام چیزیں بھی حلال ہیں، تاہم کمپنی کا اپنی ویب سائٹ پر کہنا ہے کہ یہ تصدیق شدہ حلال نہیں ہے۔

 

سوشل میڈیا پر بحث چھڑنے کے بعد صارفین نے اوریو کے پیکٹنس کی تصاویر شئیر کیں جن پر ‘حلال’ کا سرٹیفائیڈ لوگو واضح چھپا ہوا ہے۔ جس کا مطلب ہے کہ پاکستان میں بننے والے اوریو تصدیق شدہ حلال ہیں۔

 

۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اوریو کے بسکٹ تقریباً ایک صدی قبل 1912 می امریکا میں متعارف کروائے گئے تھے اور یہ سب سے زیادہ پسند کے جانے والا بسکٹ مانا جاتا ہے۔

اوریو بسکٹ سب سے پہلے 1912 میں نیشنل بسکٹ کمپنی نے بنایا تھا جس کا نام آج (Nabisco) ہے۔

loading...
loading...