بچوں کی یہ 8 تصاویر سوشل میڈیا پر ہرگز شئیر نہ کریں

Untitled-1

کراچی: ہم اکثر و بیشتر اپنی زندگی کے لمحات  سوشل میڈیا پر شیئر کرتے ہیں۔ لیکن جب بات بچوں کی آئے تو احتیاط ضروری ہے۔

آپ ہر قسم کی تصاویر سوشل میڈیا کی زینت نہیں بناسکتے۔ جہاں ہمیں انٹرنیٹ کے مثبت پہلوؤں کو تسلیم کرنا چاہیے وہیں اس کے کچھ منفی پہلو بھی ہیں۔

ہمیں پتہ ہی نہیں ہوتا کہ ہم بچوں کے لیے بیرونی خطرات اور اثرات کا سبب بن سکتے ہیں۔ اگر آپ بطور والد یا والدہ اپنے بچوں کی تصاویر سوشل میڈیا پر شیئر کرنا پسند کرتے ہیں تو ہم آپ کو محتاط رہنا ضروری ہے۔

ہم آپ کو یہاں ایسے 8 لمحات بتارہے ہیں جب آپ کو بچوں کی تصاویر شیئر نہیں کرنی چاہیے۔

٭  بغیر کپڑوں کی تصاویر

Related image

سوشل میڈیا پر والدین کی جانب سے ایسی کئی تصاویر ہیں جن میں بچے نہاتے نظر آتے ہیں اور کپڑے پہنے نہیں ہوتے۔ اس طرح نہ صرف بچوں کی پروائیوسی متاثر ہوتی ہے بلکہ آن لائن موجود لوگ باآسانی تصاویر کا غلط استعمال کرسکتے ہیں۔

٭  بیماری یا زخمی حالت میں تصاویر

Image result for Sick kid

آپ بیمار بچے کی تصویر سے شاید لوگوں کی ہمدردی حاصل کرسکتے ہیں۔ البتہ یاد رکھیے، ایسا کرنا ٹھیک نہیں۔ ایک ماہر کے مطابق ایسی تصاویر آن لائن شیئر کرنے والے والدین کو ‘اپنی تشہیر کرنے والے’ کہا گیا ہے۔ ایسے کئی والدین ہیں جنہیں بچوں کی پرورش کے دوران زیادہ ہمدردانہ کلمات سننے کو نہیں ملتے۔ بیمار بچے کی تصویر شیئر کرنے سے انہیں لائکس اور کمنٹس ملنا تو شروع ہوجاتے ہیں لیکن یوں والدین اس طرح کے ردِعمل کے عادی بھی بن سکتے ہیں۔

٭  باعثِ شرمنگی بننے والی تصاویر

Image result for awkward kid

ہمیشہ یاد رکھیں کہ بچے کے اندر عزتِ نفس اور اعتماد کی تعمیر ان کے ابتدائی سالوں سے شروع ہوجاتی ہے۔ جہاں آپ سوچتے ہیں کہ بچہ چونکہ کم عمر ہے اس لیے اسے موٹا یا سانولا پکارنے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا، مگر آگے چل کر یہ عمل ان کے لیے مسائل کا باعث بن سکتا ہے۔ کیونکہ بچے جس انداز میں اپنی شخصیت کو دیکھتے یا سمجھتے ہیں اس میں والدین کا بڑا اہم کردار ہوتا ہے۔

٭  نجی تفصیلات بتاتی تصاویر

Image result for kid away from parents

اگر آپ کے بچے نے کسی اسکول میں ایوارڈ حاصل کیا ہے وہ تصویر یا پھر آپ نے اپنے بچے کی کسی ایسی جگہ پر لی گئی تصویر سوشل میڈیا پر شیئر کی ہے۔ جہاں بچہ آپ سے اکثر دُور نظر آتا ہے تو اس طرح بُرے لوگ اور اغوا کار تک آپ کے بچے سے متعلق یہ تفصیلات باآسانی پہنچ سکتی ہیں۔

٭  واش روم استعمال کرتے تصاویر

Image result for kid using toilet first time

جس طرح بالغ افراد اپنی نجی نوعیت کی تصاویر آن لائن دیکھنا نہیں چاہتے، تو بالکل اسی طرح آپ کے بچے بھی نہیں چاہتے کہ ان کی ایسی تصاویر سوشل میڈیا پر رکھی جائیں۔ اگر آپ کے بچے نے خود سے واش روم استعمال کرنا سیکھ لیا ہے تو بلاشبہ یہ ایک کامیابی ہے۔ لیکن اس قسم کی تصاویر سوشل میڈیا پر رکھنے کے لیے نہیں ہوتیں۔ اس کے علاوہ ایسی تصاویر رکھنا شرمندگی کا باعث بھی بنتی ہیں۔

٭  دیگر بچوں کی تصاویر

Related image

بچوں کی ان کے کزنز یا دوستوں کے ہمراہ لی گئی تصاویر سوشل میڈیا پر رکھنے کی بالکل بھی ممانعت نہیں ہے، البتہ یہ خیال رکھیں کہ ان تصاویر کی شیئرنگ میں دیگر بچوں کے والدین کی رضامندی شامل ہو۔ جس طرح آپ اپنے بچے کا حساسیت کے ساتھ خیال رکھتے ہیں ٹھیک اسی طرح دیگر بچوں کے والدین بھی ان کی پرواہ کرتے ہیں۔ لہٰذا تصاویر شیئر کرنے سے پہلے دیگر بچوں کے والدین سے پوچھ لیجیے کہ انہیں تو کسی قسم کے خدشات لاحق نہیں۔

٭  مذاق کا نشانہ بنتے ہوئے

Related image

ہر قسم کی بُلنگ، مذاق اڑانے کا عمل نقصاندہ ثابت ہوسکتا ہے۔ آپ کے لیے تو یہ باعثِ لطف ہوسکتا ہے لیکن بچوں کی کمزوریوں اور نقائص آشکار کرنے کا عمل بچوں پر بُری طرح اثرانداز ہوتا ہے۔ اس عمل سے بچے کو اپنی تذلیل محسوس ہوتی ہے اور وہ مزید پریشانی میں مبتلا ہوجاتے ہیں۔

٭  غیر محفوظ تصاویر

Image result for unsafe kid

اگر آپ بچوں کو سیگریٹ اور ایسی دیگر غیر محفوظ چیزیں چھونے تک نہیں دیتے اور ہر وقت محتاط رہتے ہیں، تو بچوں کی ایسی تصاویر بھی سوشل میڈیا پر شیئر کرنے سے محتاط رہیے جن میں وہ کسی غیر محفوظ ماحول میں موجود ہے۔ اس طرح کی تصاویر سے آپ دیگر لوگوں کو تنقید کی دعوت دے سکتے ہیں۔

loading...
loading...