بادلوں سے اونچی اُڑتی شراب

Untitled-1

کوہ ہمالیہ کی ڈھلانوں پر واقع مئیلی کی پہاڑیاں چین کے جنوب مغربی صوبے یُننان میں واقع ہیں۔ یہ 2200 میٹر یعنی ( 7218 فٹ) بلند ہیں۔ یہ علاقہ تبت سے بہت قریب ہے۔ انہی پہاڑیوں میں چینی شہری او یُن کے انگوروں کے باغات ہیں۔ او یُن کے یہ انگور شراب کشید کرنے کیلئےاستعمال کیے جاتے ہیں۔

ایک طرف چین میں شراب کی کھپت میں مسلسل اضافہ دیکھا جا رہا ہے تو دوسری جانب ہمالیہ کے ڈھلوانی علاقوں میں پکنے والے انگوروں سے بنائی جانے والی شراب کے یورپی اور امریکی رسیا بھی بڑھتے جا رہے ہیں۔ او یُن کے انگوروں کے باغات اور پھر ان سے شراب کشیدگی کا عمل بادلوں سے بلندی پر واقع پہاڑیوں پر کیا جاتا ہے۔

Image result for Moet Hennessy

فرانس کے مشہور شراب ساز ادارے موئت ایننیس (Moet Hennessy) کا یہ دعویٰ ہے کہ یُننان کی پہاڑیوں پر سے سرخ شراب کی بہترین بوتل کشید کی جا سکتی ہے۔ او یُن نے اپنی شراب کشید کرنے کا سلسلہ سن 2013 میں شروع کیا تھا اور قریب پانچ برسوں کے بعد اُن کی محنت اور لگن کا عالمی اعتراف حاصل ہوا ہے۔ چینی تاجر او یُن کے ایسٹیٹ مینیجر میگسینا ڈولُو کا کہنا ہے کہ مئیلی کی پہاڑیاں فطرت کا ایک شاہ کار ہیں اور اس مقام پر فرانسیسی معیار کے مطابق انگور پکتے ہیں۔ اس معیار کو فرانسیسی معاشرت میں terroir کہا جاتا ہے۔

Image result for Moet Hennessy terroir

موئت ایننیس (Moet Hennessy) کا یہ دعویٰ ہے کہ یُننان کی پہاڑیوں پر سے سرخ شراب کی بہترین بوتل کشید کی جا سکتی ہے۔

میگسینا ڈولو کا خیال ہے کہ جلد ہی چینی عوام کو یہ احساس ہو گا کہ فرانسیسی سرخ شراب کے معیار کی شراب اُن کے ملک میں بھی تیار کی جاتی ہے۔ او یُن کی کشید کی گئی سرخ وائن کو کئی شراب کے ذائقوں کے ماہرین کو حیران کر کے رکھ دیا ہے۔ ان ماہرین نے کوہ ہمالیہ کی ڈھلان پر کشید ہونے والی سرخ وائن کی خوشبو اور اس کے بتدریج نشے کو غیر معمولی قرار دیا ہے۔

Image result for Moet Hennessy red wine field

یُنان کی پہاڑیوں پر کشید کی جانے والی اس غیر معمولی ذائقے والے سرخ وائن کے ابھی صرف دو ہزار صندوق یا باکسز سالانہ بنیاد پر تیار کیے جاتے ہیں اور ان کو چین کی مارکیٹ کے علاوہ ایشیائی، یورپی اور امریکی مارکیٹوں کو ایکسپورٹ کر دیا جاتا ہے۔ اس سرخ وائن کی کم سے کم قیمت تین سو امریکی ڈالر ہے۔

چین میں فرانسیسی شراب ساز ادارے موئت ایننیس نے چار مقامات پر انگوروں کے باغات سے سرخ شراب کشید کرنے کا عمل شروع کر دیا ہے۔ چین کی شراب کی مارکیٹ کا حجم 72 بلین امریکی ڈالر ہے اور یہ ستائیس فیصد سالانہ کی بنیاد پر افزائش کر رہی ہے۔ سن 2021 میں چین شراب کی کنپت کا دوسرا سب سے بڑا ملک بن جائے گا۔

بشکریہ DW.COM

loading...
loading...