کیل مہاسوں کے بارے میں مشہور تصورات جو در اصل غلط ہیں

pimples

چہرے پر کیل مہاسے نہ صرف ظاہری طور پر بُرے لگتے ہیں بلکہ آپ کا موڈ بگاڑنے کے لئے بھی کافی ہوتے ہیں۔ دنیا بھر میں خواتین کیل مہاسوں کے مسئلے کے لئے طرح طرح کے طریقے آزماتی ہیں۔ کیل مہاسوں کے بارے میں جو تصورات قائم ہیں ان میں سے بہت سارے غلط بھی ہوسکتے ہیں۔ اس لئے کیل مہاسوں کے علاج کے لئے ان حقائق کا جاننا ضروری ہے۔

آج ہم آپ کو ان تصورات کے بارے میں بتائیں گے جو صحیح نہیں ہیں۔ جلد کا خیال رکھنے اور کیل مہاسوں سے نجات کے طریقوں سے بھی آگاہ کریں گے۔

کھانے پینے کی اشیاء

پرانی روایات کے مطابق کھانے پینے سے جلد کی صحت پر کوئی فرق نہیں پڑتا۔ البتہ جدید سائنس اس بات کی نفی کرتی ہے اور کہتی ہے کہ غذا میں شوگر کی ذیادتی جسم میں انسولین کی پیداوار میں اضافہ کرتی ہے۔ یہ اضافہ جلد پر کیل مہاسے پیدا کرتا ہے۔ اس کے علاوہ دودھ میں موجود ہارمونز جلد پر چکنائی لاتے ہیں جس سے مسام چکنائی سے بھر جاتے ہیں۔

٭ غذا میں وہ اشیاء استعمال کرنی چاہیئں جس میں گلیسیمِک انڈیکس کم ہو، جیسے پھول گوبھی، کھیرا،وغیرہ۔

٭ غذا میں ان چیزوں کا استعمال بھی اچھا ہے جن میں زِنک شامل ہو، جیسے انڈہ، گوشت، مچھلی یا مشروم۔

٭ وٹامن اے کی مقدار بھی جلد کے مسائل، خاص طور پر مہاسوں کے لئے مفید ہے۔ ان اشیاء میں گاجر، بند گوبھی اور پالک شامل ہیں۔

تمباکو نوشی

تمباکو نوشی سے جلد پر کیل مہاسوں سے براہ راست کوئی تعلق نہیں۔ البتہ تمباکو کا استعمال جلد کے خُلیات دوبارہ بننے اور انفیکشن ختم ہونے میں تاخیر کا باعث بنتا ہے۔ تمباکو نوشی ترک کرنے سے جلد تک آکسیجن آسانی سے پہنچ پاتی ہے اور جلد تروتازہ دکھنے لگتی ہے۔

کاسمیٹیکس

کاسمیٹکس کی ساری پروڈکٹس جلد کے لئے مضر نہیں ہوتیں۔ ان پراڈکٹس کا استعمال جلد کے لئے بہتر ہے جو نان کاسمیڈو جینِک ہیں۔ ان پراڈکٹس میں الکحل اور مختلف اقسام کے تیل شامل نہیں ہوتے۔ الکحل جلد کو خشک بناتا ہے جس سے مہاسوں میں اضافہ ہوتا ہے۔ جبکہ تیل مساموں کو بند کردیتا ہے۔

ذہنی دباؤ

ذہنی دباؤ نئے نکلنے والے کیل مہاسوں کا ذمہ دار نہیں ہوتا۔ البتہ ذہنی دباؤ پہلے سے موجود مہاسوں میں بگاڑ پیدا کر سکتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ذہنی دباؤ سے مہاسوں کے صحیح ہونے کا عمل سست پڑ جاتا ہے۔

چہرے اور جلد کی صفائی

جلد پر کیل مہاسے پیدا کرنے والی چکنائی صاف کرنے کے لئے چہرہ بار بار دھویا جاسکتا ہے۔ لیکن اس سے کیل مہاسے ختم نہیں ہونگے۔ البتہ جلد ذیادہ حساس ہوجائے گی اور انفیکشن پھیلنے کے امکانات بڑھ جائیں گے۔ اس کے علاوہ گیلا چہرہ تولیہ سے رگڑ کر صاف کرنے کے بجائے تھپتھپا کر صاف کرنا چاہیئے۔

ٹوتھ پیسٹ

ٹوتھ پیسٹ میں مینتھول، ہائیڈروجن پرآکسائیڈ، کھانے کا سوڈا وغیرہ شامل ہوتا ہے جو کیل مہاسوں کو خشکی پر لانے میں مدد دے سکتا ہے۔ لیکن ٹوتھ پیسٹ کا استعمال کیل مہاسوں کو مکمل طور پر ختم نہیں کرسکتا۔ بلکہ جلد پر خشکی کی ذیادتی سے انفیکشن اور خارش بڑھ سکتی ہے۔

جلد پر موجود کیل مہاسوں کو چھیڑنے اور ہاتھ لگانے سے ان کی حالت بگڑ سکتی ہے۔ البتہ اگر آپ کے پاس پارلر جا کر فیشل لینے کا وقت نہ ہو تو گھر پر ہی انہیں صاف کرنے کے لئے بلیک ہیڈ رموور استعمال کرنا چاہیئے۔

Thanks to Brightside

loading...
loading...