وٹامن ڈی صحتِ قلب کیلئے انتہائی اہم

healath

ایک نئی تحقیق میں بتایا گیا ہےکہ وِٹامن ڈی کی اونچی سطح لوگوں میں ذیابیطس لاحق ہونے کے خطرات کو کم کردیتی ہے۔

سیؤل نیشنل یونیورسٹی  کی سربراہ مصنف ڈاکٹر سُو پارکر کا کہنا تھا کہ تحقیق میں حصہ لینےوالےجن شرکاءکے خون میں وِٹامن ڈی کی سطح 30نینو گرام فی ملی لیٹر  سے زیادہ تھی ان کو ذیابیطس ہونے کے ایک تہائی خطرات تھے۔ جبکہ وہ شرکاء جن کے خون میں وٹام ڈی کی شرح 50 نینو گرام فی ملی لیٹر سے زیادہ تھی ان میں یہ بیماری لاحق ہونے کا خطرہ کم ہوکر 1/5ہوگیاتھا۔

محققین نے بتایا کہ بالغوں کےخون میں  کم از کم 30نینوگرام وِٹامن ڈی فی ملی لیٹر ہونی چاہیئے، جو ادارے کی جانب سے تجویز کردہ سطح سے 10نینوگرام فی ملی لیٹر زیادہ ہے۔

امریکا میں 77فیصد بالغ وِٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہیں۔ یہ شرح 1980سے دُگنی ہے۔

گزشتہ تحقیق میں معلوم ہوا تھا کہ وِٹامن ڈی لوگوں کے مدافعتی نظام کو مضبوط کرتی ہے۔

ٹائپ 1 ذیابیطس ایک اینٹی امیون حالت ہے اور یہ تب ہوتی ہے جب انسان کا جسم اس خلیے پر حملہ آور ہوتا ہے جو انسولین بناتا ہے۔ ٹائپ 2 ذیابیطس ہمارے طرزِزندگی سے تعلق رکھتی ہے، جیسا کہ وزن کا بڑھا ہوا ہونا۔

سائنس دانوں کو معلوم ہوا کہ سورج کی دھوپ  دل کو،ذیابیطس اور ہائی بلڈپریشر  کے سبب  پہنچنے والے نقصان سے بچاتی بھی ہے اور ٹھیک بھی کرتی ہے۔

تحقیق کے مطابق وِٹامن ڈی خون کو گردش کرانے میں شامل نائٹرک ایسڈ کی پیداوار کو بڑھا تی اور خون میں لوتھڑے بننے سے روکتی ہے۔

تحقیق نے مزید یہ بتایا کہ وِٹامن ڈی قلبی نظام کا اندرونی دباؤ کم کرتی ہے جس کے سبب دل متعلق لاحق خطرات کم ہوسکتے ہیں۔

Daily mail بشکریہ

loading...
loading...