سپریم کورٹ:غلام حیدرجمالی کی ضمانت قبل ازگرفتاری کنفرم

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد:سپریم کورٹ آف پاکستان نے سابق آئی جی سندھ غلام حیدرجمالی کی ضمانت قبل ازگرفتاری کنفرم کردی۔

جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2رکنی بینچ نے سابق آئی جی سندھ غلام حیدرجمالی کی ضمانت قبل ازگرفتاری کی سماعت کی۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ ٹرائل نے ہائیکورٹ کے حکم کے تناظرمیں وارنٹ گرفتاری جاری کئے،ٹرائل کورٹ قانون کے مطابق مناسب حکم دے سکتی ہے۔

سابق آئی جی سندھ کے وکیل لطیف کھوسہ نے دلائل دیئے کہ کانسٹیبلزکی بھرتیوں سے آئی جی کا براہ راست تعلق نہیں ہوتا اور نہ ہی کوئی براہ راست حکم نہیں دیا ،غلام حیدرجمالی نے براہ راست کوئی حکم جاری نہیں کیا ۔

نیب کے وکیل نے کہا کہ تحقیقات مکمل ہوچکیں،نیب نے غلام حیدرجمالی سے متعلق ریفرنس بھی دائرکردیا ،احتساب عدالت میں ریفرنس کی سماعت جاری ہے۔

وکیل نیب نے مزید کہا کہ آئندہ چند ماہ میں سماعت مکمل ہوجائے گی،نیب کواس مرحلے پرغلام حیدرجمالی کی گرفتاری کی ضرورت نہیں۔

 جسٹس یحییٰ آفریدی نے ریمارکس دیئے کہ نیب کے کہنے کے بعد عدالت کے حکم کی ضرورت نہیں ۔

عدالت نے غلام حیدرجمالی کی ضمانت قبل از گرفتاری کنفرم کردی اور ٹرائل کورٹ کی جانب جاری کئے گئے وارنٹ گرفتاری ختم کردئے۔

loading...
loading...