اسحاق ڈار کیخلاف اثاثہ جات کیس میں واجد ضیاء کا بیان قلمبند

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد :احتساب عدالت میں سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کیخلاف اثاثہ جات کیس میں جی آئی ٹی سربراہ واجد ضیاء کا بیان قلمبند ہوگیا ۔

تفصیلات کے مطابق، بدھ کو احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے اسحاق ڈار کیخلاف آمدن سے زائد اثاثوں کے ریفرنس کیس کی سماعت کی ۔

 عدالت میں سابق صدر نیشنل بینک سعید احمد سمیت تینوں شریک ملزمان اور جے آئی ٹی سربراہ واجد ضیاء پیش ہوئے ۔

 واجد ضیا ءنے بطور گواہ اپنا بیان ریکارڈ کرتے ہوئے بتایا کہ جے آئی ٹی نے سابق صدر نیشنل بینک سعید احمد سمیت تمام کے بیانات ریکارڈ کئے، نیب ، ایف آئی اے، ایف بی آر سمیت مختلف اداروں سے ریکارڈ بھی اکٹھا کیا ، سعید احمد نے مختلف بینکوں میں اکاؤنٹس ہونے کی تردید جبکہ ایک غیرملکی بینک اکاؤنٹس کی تصدیق کی۔

واجد ضیاءنے غیر ملکی بینک اکاؤنٹس کے استعمال سے متعلق بتایا کہ یہ اکاؤنٹ اسحاق ڈارکی ہدایت پر کھولا گیا جس کا مقصد قرضے حاصل کرنا اور کاروبار کو سہولت دینا تھا ، 1992 سے 2008 تک اسحاق ڈار کے اثاثوں میں91 گنا اضافہ ہوا اسحاق ڈار اس اضافے کی وضاحت نہیں دے سکے۔

واجد ضیا کا بیان ریکارڈ ہونے پرعدالت نے سماعت 8 مئی کیلئےملتوی کردی،آئندہ سماعت پر واجد ضیاء پر جرح کی جائے گی۔

loading...
loading...