نواز شریف کی سزا معطلی کی پہلی درخواست واپس لینے کی استدعا منظور

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد:اسلام آباد ہائیکورٹ نے مسلم لیگ (ن)کے قائد نوازشریف کی سزا معطلی کی پہلی درخواست واپس لینے کی استدعا منظورکرلی ۔

 منگل کو   اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس  عامرفاروق اورجسٹس محسن اخترکیانی پرمشتمل بینچ نے سابق وزیراعظم نوازشریف کی متفرق درخواستوں کی سماعت کی ۔

بینچ نے نوازشریف کے وکیل سے پہلے سننے والی درخواست سے متعلق پوچھا توخواجہ حارث نے پہلے سزا معطلی درخواست واپس لینے کی پردلائل دینے کا مؤقف اپنایا ۔

جس پرعدالت نے پوچھا کہ کیا پہلی درخواست میں میڈیکل گراؤنڈزموجود تھا اورکیا میڈیکل گراؤنڈز پرنئی درخواست دائرکی جا سکتی ہے؟ ۔

خواجہ حارث نے کہا کہ پہلی درخواست 5 جنوری کودائرکی گئی جبکہ نوازشریف کو پہلی بار دل کی تکلیف 15جنوری کوہوئی صحت کومدنظررکھتے ہوئے طبی بنیادوں پرنئی درخواست دائرکی ۔

نیب پراسیکیوٹرجہانزیب بھروانہ نے مخالفت میں دلائل دیتے ہوئے کہاکہ پہلی درخواست میں ترمیم کر کے طبی وجوہات شامل کی جا سکتی ہیں ،نیب مقدمات میں ضمانت کیلئے سپریم کورٹ کے فیصلے موجود ہیں ،جسٹس کھوسہ کے فیصلے کے مطابق رہائی صرف غیرمعمولی حالات میں مل سکتی ہے اورنیب آرڈیننس 1999 کے تحت ہارڈشپ کے کیس میں رہائی مل سکتی ہے ۔

عدالت نے دلائل سننےکے بعد نوازشریف کی 5 جنوری کی سزا معطلی کی درخواست واپس لینے کی استدعا منظورکرلی ۔

loading...
loading...