خیبر پختونخوا : دوہزار اٹھارہ، بچوں کیلئے بھیانک سال ثابت

childabuseimaefg

دوہزار اٹھارہ  خیبر پختونخؤا کے بچوں کے لئے بھیانک سال ثابت ہوا ۔دو سو چودہ بچوں کے ساتھ  ریپ کے واقعات سامنے آگئے،جنکی تعداد دوہزار سترہ  کی نسبت دگنی ہوگئی ۔

 دوہزار اٹھارہ کا ڈوبتا اور  دوہزار انیس کا ابھرتا سورج ایک بار پھر خیبر پختونخؤا کے چہرے کو معصوم روحوں پر جنسی تشدد اور بھیانک قتل سے مسخ کر گیا ۔حویلیاں اور نوشہرہ میں تین اور 9 سالہ بچیوں کے ریپ کے بعد قتل اور پھر نوشہرہ ہی کے 3 سالہ یوسف کے ساتھ ریپ نے خطرناک معاشرتی رجحان کو واضح کر دیا۔

پولیس کے رپورٹڈ اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ چار سالوں میں بچوں کے ریپ اور پھر قتل میں خطرناک حد تک اضافہ ہوا ہے۔

 ایک سو بیالیس بچوں کے ساتھ زیادتی کئی گئی،  جن میں 121 بچے اور 21 بچیاں  شامل تھیں  زیادتی کے کیسز کی 142 ایف آئی ارز درج ہوئیں،  زیادتی کے کیسز میں ملوث 235  ملزمان گرفتار کئے گئے۔

loading...
loading...