سُروں کی ملکہ کو ہم سے بچھڑے 18 برس بیت گئے

NOOR-JAHAN

لاہور: سُروں کی ملکہ اور ترنم سے بھرپور آواز کی مالک ميڈم نور جہاں کی جن  کو بچھڑے 18 برس بيت گئے۔ ان کے گائے گیت آج بھی اسی طرح مقبول ہیں۔

21 ستمبر 1926 کو قصور میں پیدا ہونے والی اللہ وسائی نے نورجہاں کے نام سے شہرت پائی۔ جنہیں ان کی آواز پر ملکہ ترنم کے خطاب سے نوازا گیا۔

نور جہاں نے فلم ‘پنڈ دی کڑی’ سے اپنے کرئیر کا آغاز کیا۔  اداکاری کے ساتھ ساتھ گلوکاری کے میدان میں بھی بے پناہ شہرت حاصل کی۔

ملکہ ترنم نور جہاں نے  مختلف زبانوں میں  ہزاروں گیت گائے۔  مشہور زمانہ گانوں میں مجھ سے پہلی سی محبت، گائے گی دنیا گیت میرے، چاندنی راتیں اور دیگر شامل ہیں۔

انہوں نے 1965 میں پاک بھارت جنگ کے دوران لہوگرما دینے والے ملی نغمے گائے جن کی تازگی آج بھی برقرار ہے۔

شاندار پرفارمنس پر انہیں صدارتی ایوارڈ، تمغہ امتیاز اور پرائیڈ آف پرفارمنس سمیت متعدد ایوارڈز سے نوازا گیا۔

موسیقی کی دنیا کا یہ ستارہ 23 دسمبر 2000 کو ہمیشہ کے لئے غروب ہوگیا۔

loading...
loading...