شریف خاندان کیخلاف نیب ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنےکیلئے 5ہفتے کی مہلت

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے شریف خاندان کیخلاف نیب ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنے کیلئے 5ہفتے کی مہلت دے دی۔

یاد رہے کہ شریف خاندان کیخلاف 2 نیب ریفرنسز کا ٹرائل مکمل کرنے کیلئے سپریم کورٹ کی جانب سے احتساب عدالت کو دی جانے والی آخری مدت 7 اکتوبر کو مکمل ہوئی تھی، جس کے بعد احتساب عدالت نمبر 2 کے جج ارشد ملک نے سپریم کورٹ کو ٹرائل کی مدت میں توسیع کیلئے خط لکھا تھا۔

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بنچ نے آج مذکورہ درخواست پر سماعت کی۔

نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث سپریم کورٹ میں پیش ہوئے اور 6 ہفتوں تک مہلت دینے کی استدعا کی۔

تاہم عدالت عظمیٰ نے ریمارکس دیئے کہ 4 ہفتوں سے زیادہ کی مہلت نہیں دی جاسکتی،17نومبر تک وقت دے رہے ہیں۔

جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ ٹرائل مکمل نہ ہوا توخواجہ صاحب آپ سےشکوہ کروں گا ،ریفرنسزمکمل کرنے کیلئے مزید وقت نہیں دیں گے۔

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ خواجہ صاحب اس کیس نے2بھائیوں میں تلخی پیداکردی،مقدمات نہ نمٹائےگئےتونیب کورٹ کےجج کی بازپرس کریں گے۔

سپریم کورٹ کی جانب احتساب عدالت کو دیئے گئے وقت کی مدت ختم ہو گئی تھی جس کے باعث احتساب عدالت کے جج ارشد ملک نے العزیزیہ اورفلیگ شپ ریفرنسزکی سماعت کی مدت میں توسیع کے معاملے پر سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

خواجہ حارث نے کہا کہ ایک سال میں صرف 2 دن کی چھٹی مانگی،جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ 2میں سےایک ریفرنس میں صرف 342 کابیان رہ گیا ہے۔

خواجہ حارث بولے کہ دوسرے کیس میں واجد ضیاء کا بیان قلمبند ہونا ہے،جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کو معلوم ہے کون ہیں وہ 2 بھائی۔

 جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ سپریم کورٹ میں آپ کےمقدمات کودسمبرتک لے جاتےہیں۔

loading...
loading...