پنجاب پولیس نے چیچہ وطنی میں نور فاطمہ کی ہلاکت کو حادثہ قرار دیدیا

فائل فوٹو

فائل فوٹو

لاہور:پنجاب پولیس نے چیچہ وطنی میں نور فاطمہ کی ہلاکت کو حادثہ قرار دے دیا۔

ہفتے کو سپریم کورٹ میں جمع کرائی گئی پولیس رپورٹ کے مطابق نور فاطمہ سے زیادتی نہیں ہوئی نہ ہی اسے زندہ جلایا گیا،ڈی این اے رپورٹ میں الزامات کی تصدیق نہیں ہوئی۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ نور فاطمہ کو گھر سے 10روپے ملے جس کی اس نے قریبی دکان سے ٹافیاں اور پٹاخوں کا پیکٹ خریدا،5سے 7منٹ بعد نور فاطمہ گھر کے باہر چلاتی ہوئی ملی۔

پولیس نے واقعے کو حادثہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ واقعے کے بعد 19لوگوں کے بیانات ریکارڈ کئے گئے،نور فاطمہ کے والدین نے بچی کو زیادتی کے بعد زندہ جلانے کا الزام عائد کیا تھا۔