پشاور خودکش حملے کا مقدمہ درج،تحقیقات کیلئے 7رکنی کمیٹی تشکیل

فائل فوٹو

فائل فوٹو

پشاور:پشاور خودکش حملے کا مقدمہ تھانہ سی ٹی ڈی میں درج کرلیا گیا جبکہ تحقیقات کے 7رکنی ٹیم تشکیل دے دی گئی۔

بدھ کو پشاورکے علاقے یکا توت میں  اے این پی کی کارنر میٹنگ پر ہونے والے خود کش حملے کا مقدمہ تھانہ سی ٹی ڈی میں درج کیا گیا ہے۔

مقدمہ ایس ایچ او تھانہ آغا میر جانی شاہ واجد علی کی مدعی میں درج کیا گیا جس میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔

سی سی پی او پشاور قاضی جمیل نے ڈی آئی جی سی ٹی ڈی سلیم مروت کی سربراہی میں 7رکنی تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دے دی جو 7 روز میں اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔

پشاور میں ایس ایس پی آپریشن جاوید اقبال نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ جائے وقوعہ سے ملنے والے شواہد کی بنا پر تحقیقات آگے بڑھ رہی ہیں۔

پولیس نے پشاور میں سیکیورٹی سخت کردی ہے، شہر میں ناکوں کی تعداد بڑھا دی گئی ہے، شہر کے داخلی اور خارجی راستوں پر تلاشی کےبعد لوگوں کو داخلے کی اجازت دی جارہی ہے۔

دوسری جانب پشاور کے مختلف علاقوں میں حساس اداروں نے چھاپے مار کر 50 سے زائد مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا ہے ۔

بشیر بلور کے بیٹے  ہارون بلور کی نماز جنازہ کیلئے سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں ،جنازے کے راستوں پر پولیس کی بھاری نفری تعینات ہوگی۔

loading...
loading...