پروفیشنل جیلیسی کی وجہ سے میرے خلاف کارروائی کی گئی،راؤ انوار

فائل فوٹو

فائل فوٹو

کراچی:ملیرکےسابق ایس ایس پی راؤ انوار نے کہا ہے کہ پروفیشنل جیلیسی کی وجہ سے میرے خلاف کارروائی کی گئی،جے آئی ٹی میں فون نمبر بھی غلط ڈالا گیا۔

جمعرات کو سابق ایس ایس پی ملیرراؤ انوار انسداد دہشتگردی عدالت میں اپنی صفائیاں دیتے رہے ،دہشتگردوں کوٹھکانے لگانے والے راؤ انوار عدالت میں چیختے رہے۔

کراچی میں سابق ایس ایس ملیر راؤانوار کی درخواست ضمانت پر سماعت میں نقیب اللہ کے والد کے وکلا ءکی غیرحاضری پرسماعت 4 جولائی تک ملتوی کر دی گئی۔

انسداد دہشتگردی عدالت نے مقتول کے وکلا ءکو دلائل کیلئے آخری مہلت دے دی۔

راؤانور نے انسداد دہشتگردی عدالت میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میرے خلاف کارروائی پیشہ ورانہ رقابت کی وجہ سےکرائی گئی،پولیس نے ذاتی گروپنگ کی وجہ سےمجھ پرجان بوجھ کرقتل کا مقدمہ درج کیا،جے آئی ٹی میں میرا فون نمبر بھی غلط ڈالا،ایسا نمبر لکھا گیا جواستعمال میں ہی نہیں تھا۔

ملیر کے سابق ایس ایس پی نے پولیس کارروائی کو پروفیشنل جیلیسی قرار دے دیا۔

انہوں نے گھرکو سب جیل قرار دینے پرتحفظات بھی بتائے اور کہا کہ گھر کو سب جیل قرار دینا فیور میں نہیں،مجھ پر 2خودکش حملے ہوچکے ہیں،ایک شخص سر کی 50لاکھ روپےقیمت بھی مقررکرچکا ہے،ہر کالعدم تنظیم کے دہشتگرد نے دھمکی بھی دے رکھی ہے۔

راؤ انوار کا کہنا تھا کہ دھمکی آمیزخط سے متعلق وہ وفاق، صوبائی حکومت اور آئی جو سندھ کو بھی آگاہ کرچکے ہیں۔

loading...
loading...