نقیب اللہ قتل کیس کا گواہ اپنے بیان سے منحرف

فائل فوٹو

فائل فوٹو

کراچی:کراچی کی انسداد دہشتگردی عدالت میں نقیب اللہ قتل کیس کا گواہ شہزادہ جہانگیر اپنے بیان سے منحرف ہوگیا،پولیس پر تشدد کرکے بیان لینے کا الزام لگا دیا۔

نقیب اللہ قتل کیس میں آیا نیا موڑ آگیا،مقدمے کا گواہ بیان سے منحرف ہوگیا،پولیس نے شہزادہ جہانگیر کو واقعے کا عینی شاہد ظاہر کیا تھا۔

 شہزادہ جہانگیر کو کراچی کی انسداد دہشتگردی عدالت میں پیش کیا گیا تو اس نے صاف کہہ دیا کہ اُس کا اِس کیس سے کوئی تعلق  نہیں،پولیس نے  زبردستی کی اور تشدد کرکے  راؤ انوار کیخلاف بیان لیا۔

شہزاد جہانگیر نے عدالت سے یہ بھی کہا کہ اس کی جان کو خطرہ ہے، سیکیورٹی دی جائے۔

سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوار  بھی عدالت کے روبرو پیش ہوئے،ان کے وکیل نے عدالت سے جیل میں بی کلاس دینے کی استدعا کی،راؤ انوار کا کہنا تھا کہ بی کلاس ان کا حق ہے۔

سماعت کے دوران راؤ انوار سمیت بارہ ملزمان کو مقدمے کی نقول فراہم کی گئیں جبکہ  11سے زائد مفرور ملزمان کے ایک بار پھر ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کردیئےگئے،جس کے  بعد سماعت 29مئی تک ملتوی کردی گئی ۔

دوسری جانب مقتول نقیب اللہ کے ورثا ءنے راؤ انوار کو سب جیل منتقل کرنے کا فیصلہ چیلنج کردیا۔

loading...
loading...