منی لانڈرنگ کیس:چیف جسٹس نے29 جعلی اکاؤنٹس کی فہرست مانگ لی

فائل فوٹو

فائل فوٹو

اسلام آباد :چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے منی لانڈرنگ کیس میں ایف آئی اے سے 29جعلی اکاونٹس کی فہرست مانگ لی۔

پیر کو سپریم کورٹ میں چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار کی سربراہی میں جعلی اکاؤنٹس سے منی لانڈنگ کیس کی سماعت ہوئی، آصف زرداری،فریال تالپورکےوکیل فاروق ایچ نائیک عدالت میں پیش ہوئے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ اومنی گروپ کے اکاؤنٹس کو جعلی کیسے کہہ سکتے ہیں؟ جعلی اکاؤنٹس سے رقم کہاں گئی؟۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس میں کہا کہ جعلی اکاؤنٹس سے رقم واپس اپنے اکاونٹ میں لانے کا مقصد کیا ہے، جس پر ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ اکاؤنٹس میں رقم جمع کرانے والے اصل لوگ ہیں، رقم جن اکاؤنٹس میں جمع ہوئی وہ اکاؤنٹس جعلی ہیں۔

چیف جسٹس نے چیئر مین اومنی گروپ کو فوری طلب کرلیا اور ایف آئی اے کو حکم دیا کہ لسٹ دیں کہ 29اکاؤنٹس کس کس کے نام پر ہیں۔

جسٹس ثاقب نثار نے کہا کچھ لوگ کہتےہیں یہ اکاؤنٹس انہوں نےکھولےہی نہیں، لگتا ہے کہ جعلی اکاؤنٹس کھول کر کالا دھن جمع کرایا گیا، دیکھنا یہ ہے کہ کالے دھن کو سفید کرنےکا بینفیشری کون ہے؟۔

ڈی جی ایف آئی اے نےمنی لانڈرنگ کی تحقیقات کیلئےجےآئی ٹی بنانےکی تجویز دے دی۔

چیف جسٹس نے استفسار کیاویسی ہی جے آئی ٹی بنانی ہے، جو نوازشریف کیلئےبنائی تھی۔

loading...
loading...