قومی اسمبلی میں ارکان کی حاضری

natimageee

اسلام آباد: سابق وزیراعظم نوازشریف نے قومی اسمبلی کے تین سو اکیس میں سے ساٹھ اجلاسوں میں شرکت کی، تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان پانچ سال میں صرف بیس بار اسمبلی اجلاس میں آئےجبکہ محمود خان اچکزئی سب سے زیادہ حاضری والے پارلیمانی لیڈر ہیں۔

سپریم کورٹ کے حکم پر وزارت عظمی کا عہدہ گیا تو نواز شریف جی روڈ پر ووٹ کو عزت دو کا نعرہ بلند کیا۔ لیکن اگر قومی اسمبلی میں ان کی حاضری پر نظر ڈالی جائے تو سابق وزیراعظم نوازشریف چار سالہ دور میں کم حاضر رہنے والے ارکان میں شامل رہے۔

قومی اسمبلی کے ابتدائی 321 اجلاسوں میں وہ صرف 60 میں شریک ہوئے ، اس طرح ان کی حاضری کی شرح 16 فیصد رہی۔ دوسری طرف پارلیمنٹ کی عزت بحال کرانے اور دھاندلی سے ایوان کا حصہ بننے والوں کے خلاف علم بلند کرنے والے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سب سے زیادہ غیرحاضر پارلیمانی لیڈر رہے۔

 انہوں نے پانچ برس میں صرف 20 بار اسمبلی اجلاس میں شرکت کی ، حاضری کی یہ شرح 4 فیصد بنتی ہے۔ پارلیمنٹ کو اہمیت نہ دینے پر انہیں کئی بار تنقید کا سامنا رہا۔

پارلیمانی سربراہان کے حاضری رکارڈ کے مطابق سب سے زیادہ حاضر رہنے والے لیڈر محمود خان اچکزئی تھے ،  جنہوں نے 468 اجلاسوں میں سے 369 میں شرکت کی ، اس کے بعد جماعت اسلامی کے طارق اللہ ، پیپلزپارٹی کے نویدقمر ، قومی وطن پارٹی کے آفتاب شیرپاؤ ، اے پی ایم ایل کے افتخارالدین ، نمایاں حاضر رہنے والے پارلیمانی لیڈرز رہے۔

ارکان کی عدم دلچسپی کا انداز اس بات سے بھی لگایا جاسکتا ہے کہ پانچ برس میں اسمبلی کے 74 فیصد اجلاس ایسے تھے جن کے آغاز یا اختتام پر ایک چوتھائی سے بھی کم ارکان ایوان میں موجود تھے۔ اور پانچ برس میں کورم کی کمی کی وجہ سے اسمبلی کے اجلاس 100 سے زائد بار ملتوی کرنا پڑے تھے ۔

loading...
loading...