جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر فائرنگ کی ابتدائی رپورٹ چیف جسٹس کوارسال

فائل فوٹو

فائل فوٹو

لاہور:لاہورمیں سپریم کورٹ سینئر جج جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر فائرنگ کے واقعے کی ابتدائی رپورٹ پولیس نے چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار کو ارسال کردی۔

فرانزک سائنس ایجنسی بھی آج اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔

گزشتہ روزلاہور کے ماڈل ٹاون میں جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر نا معلوم افراد کی فائرنگ کے واقعے  کے بعد فرانزک ٹیم نے شواہد اکھٹے کئے اور پولیس افسران نے جائے وقوعہ کا جائزہ لیا، جس کے بعد ابتدائی رپورٹ چیف جسٹس کو ارسال کر دی گئی ہے ۔

پولیس ذرائع کے مطابق ،فائرنگ کے واقعہ سے متعلق شفٹ انچارج پاکستان رینجرز نائیک عبدالرزاق نے  صبح 10 بج کر 45 منٹ پر شکایت رپورٹ کروائی ۔

پولیس رپورٹ کےمطابق، جسٹس اعجاز الحسن کے گھر کے مین گیٹ کے اوپر والے حصے پر گولی لگتے ہوئے اندر گری۔

پنجاب فرانزک ایجنسی کو تجزیہ کرنے کیلئے بلایا گیا، جس نے تمام شواہد اورریکارڈ کو محفوظ کرلیا ،فرانزک ایجنسی اپنی رپورٹ آج پیش کرے گی۔

 ابتدائی تحقیقات کے مطابق گولی کافی فاصلے سے کی گئی ہے اور جس سمت سے گولی آئی تھی اس پر تحقیقات کاآغاز کردیا گیا ہے۔

ابتدائی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سیکیورٹی اداروں کی جانب سے قریبی علاقوں میں سرچ آپریشنز کئے گئے ہیں ۔

پنجاب فرنزک ایجنسی نے موقع سے ملنے والی گوئی فائر آرمز اینڈ ٹول مارکس میں مشاہدے کیلئے بھجوا دی ہے جس کے موصول ہونے کے بعد حتمی رپورٹ تیار کی جائے گی۔

loading...
loading...