امریکا اور شمالی کوریا کے ایٹمی طور پر غیر مسلح ہونے سے متعلق معاہدے پر دستخط

فائل فوٹو

فائل فوٹو

سنگاپور:امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کورین صدر کم جونگ ان نے شمالی کوریا کے ایٹمی طور پر غیر مسلح ہونے سے متعلق معاہدے پر دستخط کردیئے۔

ہوگئی وہ ملاقات جس کا تھا دنیا کو انتظار ،تلخیوں اور دوریوں کا دور ختم،مسکراہٹوں اور ملاقاتوں کا دور شروع،معاہدے پر دستخط کے بعد صحافی نے سوال کیا کہ  کیا کم جونگ اُن ڈی نیوکلیئرائزیشن پر  راضی ہوجائیں گے تو ٹرمپ نے جواب دیا بلا شبہہ۔

امریکی صدر کا کہنا تھا کہ وہ کم جونگ ان کو وائٹ وائٹ ہاؤس میں مدعو کریں گے،کم سے خاص رشتہ بن گیا ہے،دوبارہ ملاقات ہوگی۔

اس سے قبل سنگاپور کے جزیرے سینتوسا میں قائم کاپیلا ہوٹل میں دونوں رہنماؤں کی ملاقات ہوئی،ہوٹل پہچنے پر دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے  سے مصافحہ کیا۔

امریکی صدر نے کہا کہ کَمِ  سے ملاقات اعزاز  ہے! کم جونگ اُن نے امریکی صدر سے کہا آپ سے مل کر اچھا لگا!تعصبات آگے بڑھنے میں رکاوٹ تھے! ہم نے راستے کی رکاوٹوں کو پیچھے چھوڑ دیا۔

فوٹو سیشن کے بعد دونوں رہنما ءملاقات کے کمرے میں چلے گئے،جہاں ون آن ون مذاکرات ہوئے،یہ ملاقات لگ بھگ 48منٹ تک جاری رہی۔

امریکی صدرکا کہنا تھا کہ شمالی کوریا سے اب اچھے تعلقات قائم ہوں گے، مل کر کام کرکے ہی اہداف حاصل کر سکیں گے۔

کم جونگ اُن بولے تلخ ماضی کو بھول کرامن کی نئی صبح کی امید کرتے ہیں،تخلیے میں ہونے والی ملاقات کے بعد دونوں صدور نے وفود کی سطح پر بھی ملاقات کی ۔

جس میں امریکی وزیرخارجہ جان بولٹن، چیف آف اسٹاف،کم جونگ ان کے دست راست کم یونگ چول، موجودہ سابق وزیر خارجہ بھی شریک رہے۔

loading...
loading...