دولت مند لوگوں کی زندگی میں روزانہ کے دس کام

۔ — فائل فوٹو

 — فائل فوٹو

کیا آپ دولت حاصل نہیں کرنا چاہتے؟ یقیناً چاہتے ہوں گے،اورآپ اپنے ارد گرد موجود امیر لوگوں کو حسرت بھری نگاہوں سے دیکھتے بھی ہوں گے کہ  کاش، میرے پاس بھی اتنی دولت آجائے۔ تاہم، دولت مند ہونا کوئی حادثہ نہیں ہوتا۔ اگر آپ دولت حاصل کرنا چاہتے ہیں تو آپ کو یہ دیکھنا اور جاننا ہوگا کہ دولت مند لوگ کیا کرتے ہیں جو انھیں دولت مند بناتا ہے۔

آج کے تیز رفتار ترین ٹیکنالوجی کے دور میں ہمیں کامیابی کے بارے میں بہت سی معلومات اپنی انگلیوں پر مل جاتی ہیں جو ہمیں دولت مند تو نہیں بناتیں، مگر ہمیں مزید بوجھل ضرور کردیتی ہیں۔ کیوں کہ یہ معلومات بہت ہی پیچیدہ ہوتی ہیں اور ہم اس مخمصے میں بھی پھنسے رہتے ہیں کہ ہمیں دولت بنانے کا درست اور تیز رفتار طریقہ مل جائے تا کہ ہم جلد از جلد امیر ہوجائیں۔

انٹرنیٹ کے آنے کے بعد ہمارے سامنے ایسے بہت سے آن لائن اشتہارات، ٹیوٹوریل اور کورسز آتے ہیں جو ہمیں یہ بتاتے  ہیں کہ اگر ہم اُن کا مخصوص  کورس کرلیں یا ان کا پروگرام خرید لیں تو گھر بیٹھے پیسہ کمانے کے قابل ہوجائیں گے۔

لیکن، کیا واقعی یہ سب چیزیں ہمیں وہ دیتی ہیں جو ہم چاہتے ہیں؟ کیا معاملہ اس سے کہیں پیچیدہ نہیں جتنا کہ دکھایا جاتا ہے؟ اگر کامیابی کا حصول اس سے بھی سادہ ہو تو کیسا رہے گا؟

یہ سوالات ڈین گریزیوسی نے اپنے ناظرین سے کیے جو گزشتہ سترہ برس سے روزانہ  ٹی وی پراپنا ایک پروگرام چلاتے ہیں  اور رئیل اسٹیٹ کی تربیت کے ان کے انفومرشلز بہت مقبول ہیں۔

ڈین  نیویارک ٹائمز بیسٹ سیلنگ کتابوں کا لکھاری  ہونے کے علاوہ رئیل اسٹیٹ بزنس کے ٹرینر اورامریکاکے بہترین افراد کےبہترین دوست بھی ہیں۔ ڈین گریزیوسی کا شمار اس وقت اگرچہ امریکاکے امیر ترین لوگوں میں ہوتا ہے، لیکن وہ ایسا ہمیشہ سے امیر نہیں تھے۔

ان کے گھر میں ہمیشہ معاشی مسائل کا رونا رہتا تھا۔ ڈین گریزیوسی اس بارے میں اکثر سوچا کرتے تھے کہ وہ کیسے اپنے حالات کو بہتر بنا سکتے ہیں۔

 ہم دونوں کی دوستی کا آغاز برسوں پہلے ہوا تھا۔ ان سے کئی ملاقاتوں کے بعد مجھے یہ پتا چلا کہ ان کی سوچ کیا ہے اور انہوں  نے جو کچھ تخلیق کیا، کیسے کیا۔

اس موضوع کو ہم نے دولت مندوں کی عادات کے طور پر اختیار کیا اور اس دوران ڈین نے مجھے کئی ایسے واقعات بتائے جنھوں نے مجھے رلادیا۔ ان کی گفتگو سے جو نکتہ مجھ پر واضح ہوا، وہ یہ ہے کہ ہم عموماً کامیابی کیلئے جو کچھ اہم سمجھتے ہیں، وہ ہماری توقعات سے کہیں چھوٹی چیزیں ہوتی ہیں۔ ڈین سے گفتگو کے بعد ان کی زندگی کی روشنی میں جو دس عوامل میں نے کامیابی اور امیری کیلئے ضروری پائے، وہ یہاں بیان کرتا ہوں۔

دس آسان عوامل جن کی مدد سے آپ کامیاب اور امیر بن سکتے ہیں

 آپ  کا خود سے مخلص ہونا

 آپ کو آئینے میں جو شخص نظر آتا ہے، کیا آپ اس سے خوش ہیں؟ یہ وہی فرد ہے جس سے آپ روزانہ دن میں کئی مرتبہ ملتے ہیں۔ آپ جیسا بننا چاہتے ہیں، کیا آپ ویسوں کے ساتھ اٹھتے بیٹھتے ہیں؟ آپ جیسا انسان بننا چاہتے ہیں، اس سے ہم آہنگ ہوجائیں گے تو آپ سمجھئے کہ آپ خود سے مخلص ہیں۔ خواہش کافی نہیں۔ اس پر عمل بھی ضروری ہے۔

اپنی صبح کا آغاز کامیاب لوگوں کی طرح کرنا

ہم سب کی زندگی میں مسائل ہیں۔ یہ مسائل اور پریشانیاں اکثر معمولی اور چھوٹے ہوتے ہیں تو بعض اوقات بڑے۔ اگر آپ اپنے مسائل کو محدود کرسکتے ہیں تو آپ بہ آسانی ان کے حل پر فوکس کرسکتے اور آگے بڑھ سکتے ہیں۔

صبح کے معمولات آپ کے پورے دن پر اثر انداز ہوتے ہیں۔ لہٰذا، اگر آپ نے اپنی صبح کے معمولات کو کامیاب لوگوں کی صبح کے معمولات جیسا کرلیا تو آپ کا پورا دن کامیاب گزرے گا۔ یوں، آپ کے ساتھ جو مسائل پیش آئیں گے، ان پر آپ کی توجہ کم ہوگی اور ان کے حل پر زیادہ رہے گی۔ آپ کم پریشان ہوں گے۔

 اپنی موجودہ نعمتوں کی شکر گزاری

 شکر گزاری محض ایک زبانی عمل نہیں، زندگی کو بدل دینے والا بہت بڑا عامل ہے۔ صبح اٹھنے کے بعد ہر ہر لمحے کا فطری حسن دیکھئے۔ آپ کے گرد جو چیزیں موجود ہیں، ان کے وجود کا ادراک کیجیے۔ صبح سویرے جاگنے پر آنکھیں کھولیں تو سب سے پہلے اپنی سانس پر توجہ کیجیے کہ اللہ عزو جل نے موت سے دوبارہ زندگی بحال کی۔ اللہ کا شکر ہے۔

 گریزیوسی کے بہ قول، زندگی کی چھوٹی اور بنیادی چیزوں پر شکر ادا کیجیے۔ بڑی چیزوںکی تلاش میں نہ رہیے۔

 خود اپنے روزمرہ معمولات اور سرگرمیوں سے مربوط کیجیے، نہ کہ دن بھر جو مسائل اور رکاوٹیں پیش آرہی ہیں، ان پر ردِعمل ظاہر کریں۔ مثال کے طور پر، اگر آپ کسی سے ملاقات کررہے ہیں تو آنے والے وٹس ایپ پیغام یا فون پر متوجہ نہ ہوں۔ اگر آپ ایسا کریں گے تو آپ کی توجہ آپ کے اصل کاموں سے ہٹ جائے گی۔ آپ خود سے اور اپنے اہداف سے دور ہوجائیں گے۔

اپنی روح کو غذا فراہم کرنا

 اس کیلئے اچھی کتابیں پڑھئے۔ مراقبہ کیجیے۔ نماز اور دعا کا اہتمام کیجیے۔ وہ سب کام کیجیے جو آپ کی روح کو توانا کریں۔

جسم کو غذا دینا

 گریزیوسی کی تجویز ہے کہ سادہ پانی میں لیموں کا رس ڈال کر پیا جائے یا سبزیجاتی رس استعمال کیے جائیں تو بہتر ہوگا۔ یوں، آپ کے جسم کو غذا ملے گی اور وہ توانا ہوگا۔

ایکسر سائز

 ورزش، ورزش، ورش۔ کون سی ورزش؟ جو بھی آپ کیلئے مناسب اور آپ کیلئے فائدہ رساں ہو۔

آٹھواں عمل ان چیزوں کی فہرست کی تیاری ہے جو آپ کو حاصل کرنے ہیں، نہ کہ آپ کو کرنا آپ کی مجبوری ہے۔ گریزیوسی جب چھوٹا تھا تو ایک آٹو شاپ میں کاروں پر پینٹ کیا کرتا تھا جو اسے بہت اچھا لگتا تھا۔ اور اب، اگرچہ کانفرنس کال اسے پسند نہیں مگر وہ خود کو یاد کراتا ہے کہ اسے جو کچھ حاصل کرنا ہے، اس کیلئے کانفرنس کال کرنا ضروری ہے، نہ کہ کاروں پر رنگ کرنا… مائنڈسیٹ میں واضح تبدیلی کی علامت۔

حد سے زیادہ پُرجوش ہوں اور اپنے ’’کیوں‘‘ سے پُرعزم رہیں

آپ کا ’’کیوں‘‘ آپ کے سامنے بہت ہی واضح ہونا چاہیے۔ گریزیوسی اس کیلئے ایک مشق تجویز کرتے ہیں۔ اس مشق نے گریزیوسی کی زندگی اور اس کا مقصد ہمیشہ ہمیشہ کیلئے بدل دیا۔

اپنے خیالات کو بدلیے، نہ کہ ان پر کڑھتے رہیں

 اس کیلئے سب سے پہلے اپنے خیالات پر ہمیشہ متوجہ رہیں۔ اس ضمن میں سب سے بہتر طریقہ مائنڈفلنس کی مشق ہے۔ مائنڈفلنس کے بارے میں آپ اسی بلاگ میں میرے مضامین پڑھتے رہتے ہیں۔

جب آپ مزید کیلئے محنت کررہے ہوتے ہیں تو ذہن میں اکثر یہ بات آتی ہے کہ خود کو بہتر کرنے کیلئے ابھی ہزاروں چیزیں سیکھنے اور بدلنے کی ضرورت ہے۔

 تب یہ خیال بھی آتا ہے کہ کیا یہ سب کرنے سے کوئی فائدہ ہوگا یا نہیں۔ لیکن، درج بالا دس عوامل وہ عادات ہیں جنھیں اپنی زندگی میں اختیار کرکے آپ کی
زندگی کی ہر شے بدل سکتی ہے۔ کامیابی لوگوں کی سوچ سے زیادہ آسان ہے۔

.نوٹ: یہ مضمون مصنف کی ذاتی رائے  ہے ادارے کا اس تحریر سے متفق ہونا ضروری نہیں   

loading...
loading...